دل ناداں عجب جستجو میں ہے
تم سے شوق گفتگو میں ہے

جدا خود سے کروں تو کیسے کروں
تیری چاہت تو گردش لہو میں ہے