Name:  14241506_667122990121244_74888905327031301_o.jpg
Views: 220
Size:  68.0 KB


 


پولیس نے چور پکڑ لیا چور ماں کا نافرمان تھا پولیس نے چور کو ڈنڈا ڈولی کیا اور چھتر مارنا شروع کر دیے ماں ممتا سے مجبور ہو کر تھانے پہنچ گئی ماں نے جوں ہی تھانے میں پاؤں رکھا چور نے ہائے ماں ہائے ماں کے نعرے لگانا شروع کر دیے ماں بیٹے کی طرف جانے کے بجائے سیدھی تھانے دار کے پاس پہنچی اور اونچی آواز میں بولی صدقے جاواں وے تھانے دارا توں اج اینھوں ماں تے یاد کرا دتی اے (صدقے جاؤں تھانے دار صاحب آپ نے آج اسے ماں یاد کرا دی) یہ واقعہ صرف واقعہ نہیں یہ پنجابی کا محاورہ بن چکا ہے پنجاب کے لوگ آج بھی مصیبت میں دوستوں کو یاد کرنے والوں کو دیکھ کر اونچی آواز میں صدقے جاواں تھانے دارا کا نعرہ لگاتے ہیں۔

یہ واقعہ چوہدری اعتزاز احسن نے دو ستمبر 2014ء کو پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس میں اس وقت سنایا جب عمران خان اور علامہ طاہر القادری اسمبلی کے سامنے دھرنا دے چکے تھے اور میاں نواز شریف کا ہیوی مینڈیٹ ایک بار پھر آخری سانسیں لے رہا تھا بس ایک یلغار کی دیر تھی اور حکومت فارغ ہو جاتی لیکن پھر میاں نواز شریف کی خوش قسمتی نے انگڑائی لی اور دو غیبی طاقتیں میدان میں آ گئیں امریکا نے اپنے سفیر کے ذریعے مقتدر حلقوں کو پیغام دے دیا ہم کسی قسم کی غیر جمہوری حرکت کوسپورٹ نہیں کریںگے اور پارلیمنٹ تمام تر اختلافات کے باوجود حکومت کے پیچھے کھڑی ہو گئی اور یوں عمران خان کا دھرنا اپنی آب وتاب کھو گیا.
شریف برادران نے آنے والے دنوں میں اپنے کزن جاوید شفیع کو درمیان میں ڈالا یہ علامہ طاہر القادری سے رابطے میں تھے جاوید شفیع نے علامہ طاہر القادری سے میاں صاحبان کی والدہ کا رابطہ کرایا علامہ صاحب بیگم صاحبہ کو انکار نہیں کر سکتے تھے چنانچہ دھرنا لپیٹا اور یہ عمران خان کو تنہا چھوڑ کر غائب ہوگئے آرمی پبلک اسکول پشاور کا سانحہ پیش آیا اور عمران خان بھی دھرنے کے خاتمے پر مجبور ہوگئے لیکن یہ حقیقت ٗحقیقت رہی اگر اس وقت آصف علی زرداری اور ان کے دونوں اپوزیشن لیڈر سید خورشید شاہ اور اعتزاز احسن حکومت کا ساتھ نہ دیتے تو میاں نواز شریف ماضی کا قصہ بن چکے ہوتے اور پلوں کے نیچے سے اس وقت تک اربوں کیوسک میٹر پانی گزر چکا ہوتا۔ہم صدقے جاواں وے تھانے دارا کی طرف واپس آتے ہیں اعتزاز احسن پارلیمنٹ ہاؤس میں حکومت کی حمایت کے لیے کھڑے ہوئے پنجابی چور کا یہ واقعہ سنایا اور پھر میاں نواز شریف کی طرف اشارہ کر کے کہا یہ پارلیمنٹ ہماری ماں ہے یہ ہماری اصل طاقت ہے.
مجھے آج مہینوں بعد میاں نواز شریف کو پارلیمنٹ میں دیکھ کر خوشی ہو رہی ہے اور میں عمران خان اور طاہرالقادری کو شاباش دینے پر مجبور ہو رہا ہوں صدقے جاواں وے تھانیدارا تو ماں تے یاد کرا دتی۔ مجھے یاد ہے یہ الفاظ اس وقت پاکستان مسلم لیگ ن کے قائدین کو اچھے نہیں لگے تھے ان کے رنگ فق ہو گئے تھے اور وہ کن انکھیوں سے ایک دوسرے کی طرف دیکھ رہے تھے یہ لوگ آج بھی اس واقعے کا تذکرہ کرتے ہیں تو یہ اعتزاز احسن کی تقریر کو دودھ میں مینگنیاں قرار دیتے ہیں اور یہ کہتے ہیں پیپلز پارٹی نے ہمارے منہ پر تھپڑ مار کر اپنا احسان ضایع کر دیا تھا لیکن میں ہر بار ان سے اختلاف کرتا ہوں۔ کیوں؟ کیونکہ میں دل سے سمجھتا ہوں چوہدری اعتزاز احسن کی بات غلط نہیں تھی.
یہ حقیقت ہے میاں برادران کو پارلیمنٹ اور عوام صرف اس وقت یاد آتے ہیں جب عمران خان پارلیمنٹ ہاؤس کے سامنے جا بیٹھتے ہیں یا پھر رائے ونڈ کی طرف مارچ کا اعلان کردیتے ہیں آپ کو یقین نہ آئے تو آپ 2014ء کا ڈیٹا نکال لیجیے میاں نواز شریف 2013ء کے الیکشن کے بعد دھرنے تک صرف 7مرتبہ قومی اسمبلی میں آئے تھے جب کہ انھوں نے 4 جون 2014ء تک سینیٹ میں قدم نہیں رکھا تھا یہاں تک کہ اپوزیشن نے سینیٹ کا بائیکاٹ کر دیا تھا آپ دھرنے کے بعد بھی پارلیمنٹ میں وزیراعظم کی آمد کا ڈیٹا نکال لیجیے آپ کو وزیراعظم قومی اسمبلی میں جاتے نظر نہیں آئیں گے آپ وزیراعظم کا عوام سے انٹرایکشن بھی دیکھ لیجیے.
یہ 2014ء سے 2016ء تک عوام کو بھول کر وزیراعظم ہاؤس میں خاموش بیٹھے رہے لیکن جوں ہی پانامہ لیکس کا ایشو پیدا ہوا اور وزیراعظم کو یہ پیغام دے دیا گیا پی ایم شوڈ اسٹیپ ڈاؤن تو میاں نواز شریف فوراً اٹھے اور عوامی سمندر میں اتر گئے یہ مئی 2016ء میں علیل تھے ڈاکٹروں نے انھیں اوپن ہارٹ سرجری کا مشورہ دے رکھا تھا لیکن یہ اس کے باوجود لندن جانے سے پہلے بنوں ٗ سوات اور ڈیرہ اسماعیل خان گئے اور عوامی جلسوں سے خطاب کیا یہ دل کے آپریشن کے بعد بھی مسلسل عوامی جلسے کر رہے ہیں میں نے کل انھیں چترال میں عوام سے خطاب کرتے دیکھا یہ چترال کے عوام کو بڑے جذبے کے ساتھ یونیورسٹی اسپتال سڑکیں اور سو دیہات کو بجلی عنایت کر رہے تھے اور یہ اعلان فرما رہے تھے ہم اگلے سال کے وسط تک لواری ٹنل بھی مکمل کر دیں گے یہ کیا ہے؟ آپ کس کو دھوکا دے رہے ہیں۔
میں یہ نہیں کہتا وزیراعظم کا جذبہ سچا نہیں یہ اعلانات یقینا بادشاہ وقت کی فیاضی کی دلیل ہوں گے لیکن سوال یہ ہے یہ فیاضی صرف اس وقت کیوں جاگتی ہے جب عمران خان اسلام آباد یا لاہور کی طرف چل پڑتے ہیں میاں صاحب اگر واقعی عوام کو حاکمیت اعلیٰ کا ماخذ سمجھتے ہیں تو پھر یہ دھرنا فری دنوں میں کہاں چلے جاتے ہیں بادشاہ وقت کو عوام عام دنوں میں یاد کیوں نہیں آتے اور پارلیمنٹ اگر واقعی جمہوریت کی ماں ہے یا یہ سیاست کا کعبہ ہے تو پھر یہ ماں اور یہ کعبہ سکون کے دنوں میں اپنے صاحبزادوں اور اپنے زائرین کی شفقت سے کیوں محروم رہتا ہے مجھے محسوس ہوتا ہے یہ لوگ پارلیمنٹ کو صرف اپنے اقتدار کا سیکیورٹی گارڈ اور عوام کو ووٹ دینے والی مشین سمجھتے ہیں.
ان کے اقتدار کو جوں ہی خطرہ پیش آتا ہے یہ دوڑ کر پارلیمنٹ کے پیچھے چھپ جاتے ہیں اور ان کو جوں ہی محسوس ہوتا ہے ان کو ووٹوں کی دوبارہ ضرورت پڑ سکتی ہے تو یہ بھاگ کر ووٹوں کی مشین کے پاس چلے جاتے ہیں اور پیار سے اس کے سر پر ہاتھ پھیرنا شروع کر دیتے ہیں حکومت کی حالت یہ ہے پاکستان مسلم لیگ ن کے ایک وزیر نے بتایا ہم عمران خان کو اپنا محسن سمجھتے ہیں میں نے پوچھا کیوں؟ وہ بولے عمران خان نکلتا ہے تو وزیراعظم ہم سے ہاتھ ملا لیتے ہیں میں نے پوچھا کیا آپ کی وزیراعظم سے ملاقات نہیں ہوتی وزیر نے انکشاف کیا ملاقات تو دور وزیراعظم میرے نام اور شکل سے بھی واقف نہیں ہیں آپ شاید اسے یاوہ گوئی سمجھیں گے لیکن یہ حقیقت ہے وفاقی کابینہ میں ایسے وزراء بھی موجود ہیں جن سے وزیراعظم نے تین برسوں میں کوئی انفرادی ملاقات نہیں کی یہ وزراء جب غیر ملکی سربراہان سے ملاقات کے لیے قطار میں کھڑے ہوتے ہیں تو وزیراعظم کو ان کا نام اور پورٹ فولیو یاد نہیں ہوتا چنانچہ یہ انھیں آور فیڈرل منسٹر قرار دے کر آگے روانہ کر دیتے ہیں.
آپ وزیراعظم کی پاکستان مسلم لیگ ن کے ارکان اسمبلی سے ملاقاتوں کا ڈیٹا بھی نکال لیجیے وزیراعظم نے پارلیمانی پارٹی کی پہلی میٹنگ 27 جنوری 2014ء کو دھرنے سے قبل کی تھی اور دوسری 4 اگست 2016ء میں پانامہ مارچ سے پہلے ہوئی ہمارے ملک میں بم دھماکے ہوتے ہیں اور ان میں سیکڑوں لوگ بھی شہید ہوتے رہتے ہیں لیکن وزیراعظم صرف ان شہداء کو شہداء ان زخمیوں کو زخمی اور ان لواحقین کو لواحقین سمجھتے ہیں جو عمران خان کے مارچوں کے دوران دہشت گردی کا نشانہ بنتے ہیں یہ عام دنوں کے شہداء کی تعزیت تک مناسب نہیں سمجھتے۔
یہ کیا ہے؟ کیا یہ رویہ مناسب ہے؟ اگر ہاں تو پھر میری چترال کے لوگوں سے درخواست ہے آپ بنی گالہ آئیں اور اس تھانیدار عمران خان کا شکریہ ادا کریں جس کی وجہ سے آج آپ کو یونیورسٹی اسپتال، سڑک اور بجلی مل رہی ہے۔ تھانیدار عمران خان اگر رائے ونڈ کا رخ نہ کرتا تو میاں نواز شریف کو چترال یاد نہ آتا میں ساتھ ہی عمران خان سے بھی درخواست کرتا ہوں آپ بھی اگلے دو سال اسی طرح سڑکوں پر رہیں آپ کی مہربانی سے ایم این اے وزراء اور پارلیمنٹ کو بھی وزیراعظم کی زیارت نصیب ہوتی رہے گی اور عوام کو بھی سڑکیں پانی پل اسپتال اور یونیورسٹیاں ملتی رہیں گی اور آپ نے اگر یہ مہربانی فرما دی تو ملک کے 20 کروڑ عوام 2018ء میں صدقے جاواں وے تھانیدار عمران خان کا نعرہ لگانے پر مجبور ہو جائیں گے اور یہ وہ تبدیلی ہو گی جس کے انتظار میں قوم کی آنکھیں پتھرا گئی ہیں عوام 70 برس سے حکومت کو اپنے درمیان دیکھنا چاہ رہے ہیں اور تھانیدار عمران خان یہ کام کر رہے ہیں یہ میاں صاحب کو عوام ایم این اے اور پارلیمنٹ تینوں یاد کرا رہے ہیں چنانچہ میں بھی یہ کہنے پر مجبور ہو رہا ہوں صدقے جاواں وے تھانیدار عمران خان۔