غزل
وصال رت کے حسیں موسموں سے ڈرتے ھیں
یہ کون لوگ ھیں جو خوشبوؤں سے ڈرتے ھیں
سمبھال رکھتے ھیں سورج کسی تمنا کے
فراقء شب کے مگر جگنوؤں سے ڈرتے ھیں...
شفق ذدہ ھو زمیں کوچہ ء محبت کی
تو خواب شوق کہاں بارشوں سے ڈرتے ھیں
یوں روزوشب ھوں تیری یاد کے تعاقب میں
کہ تیرے درد میرے حوصلوں سے ڈرتے ھیں
جہاں جہاں میری آنکھیں ھیں منتظر تیری
فلک کے چاند انھیں راستوں سے ڈرتے ھیں
میں شاہزادی سیاہ بخت تو نہیں پھر بھی
تیرے نصیب میری منزلوں سے ڈرتے ھیں
میں آب نور سجاتی ھوں گوشے گوشے میں
تیرے جمال میرے آئینؤں سے ڈرتے ھیں
جہاں سکونت ھو پر گوشہء سکوت نہ ھو
تو برگ و بار بھی ان وادیوں سے ڈرتے ھیں
یہ کائنات کہیں آخری ستارہ ھے
سو اس کے چاند بھی اب گردشوں سے ڈرتے ھیں
غزالہ شاہد