نہ نواز شریف ہمارا چچا ذاد ہے نہ عمران خان ماموں زاد
لیکن اتنی شعور ہے ہم میں کہ کون کیا کر رہا ہے کون مخلص ہے کون غدار
اگر دونوں کی تاریخ دیکهی جائے تو نواز شریف جیسا بزدل انسان نہیں ملے گا
جو لوگ سمجھتے ہیں کہ نواز شریف نے اپنی طرف سے تقریر کی ہے اس کے سوچ پر ماتم ہی کرسکتے ہیں
جو شخص 3 مرتبہ مودی سے ملاقات کر کے کشمیر کا نام لینا گوارہ نہ کیا ہو وہ اقوام متحدہ میں اپنی مرضی سے کیسے کشمیر کا نام لے سکتے ہیں
جو شخص خود ظالم ہو قصور وار ہو ماڈل ٹاؤن جیسے واقعے میں اور مختلف قسم کے ظلم و بربریت میں وہ خود اپنی مرضی سے کیسے
جو شخص اپنے ملک میں انصاف کے راستے میں رکاوٹ ہو اس سے یہ توقع بےوقوفی ہے
جس شخص کو غریب عوام کے پیسوں کا احساس نہ ہو اس سے توقع رکهنا دماغی کمزوری ہے
جس شخص کے حکمرانی میں اپنا ملک مقبوضہ ہو وہ مقبوضہ کشمیر کی بات کیسے کر سکتا ہے
جس شخص کے بارڈر پر روزانہ گولہ باری ہو رہی ہو اور وہ ایک من ایندھن سے گرم نہ ہو صرف بیان دینے کے لیے وہ کیا ہماری رہنمائی کرے گا اقوام متحدہ میں


یقیناً اس تقریر کے بعد مودی سے اظہارِ ہمدردی کی ہوگی اور اپنی لاچاری کا رونا رویا ہوگا
کاش کہ آپ مخلص ہوتے آپ قوم کو تقسیم کرنے کے درپے نہ ہوتے آپ اپنا نہ سوچتے آپ کشمیر سے پہلے پاکستان کے حالات پر غور کرتے کرپشن کرنے والوں کو محفوظ راستہ نہ دیتے
ظالم کا ساتھ نہ دیتے انصاف کے لئے کچھ حرکت کرتے عوام کے پیسوں میں خیانت نہ کرتے عوام کی فلاح و بہبود کے لیے کچھ کرتے پیسہ روڈز عمارتوں پر برباد کرنے کی بجائے ہم عوام پر خرچ کرتے تو یقین مانیں نواز انکل ہمیں ایک مخلص حکمران کی تلاش نہ ہوتی وہ آپ ہوتے آج ہمیں یقین ہوتا کہ یہ تقریر آپ نے اپنی مرضی سے کی ہے اس پر تو ہم مظلوم عوام صرف یہی کہہ سکتے ہیں کہ
شکریہ راحیل شریف

Name:  12032987_156781924666715_2106592645126084592_n.jpg
Views: 1076
Size:  35.2 KB