Name:  677e43be853459a9d21a02c8f53833fe.jpg
Views: 120
Size:  24.0 KB

750
روپے لینا خون چوسنا ہے کیا ؟


 


این ٹی ایس ان اداروں سے خود جا کر نہیں کہتا، وہ ادارے خود درخواست کرتے ہیں کہ ہمارے امیدواروں کا ٹیسٹ لیں۔سیٹ ایک ہو یا ایک ہزار یہ بات پہلے ہی سے سب جانتے ہیں، سیٹوں کی تعداد پڑھنے کے بعد ہی وہ اپلائی کرتے ہیں۔اب اگر امیدوار ہزاروں یا لاکھوں کی تعداد میں ہیں تو ان کا امتحان لینا بذاتِ خود ایک امتحان ہے۔ اس پر سیکڑوں میں نہیں لاکھوں میں اخراجات اٹھتے ہیں۔اس لیے یہ خون چوسنے والی بات نامناسب ہے۔ ایک آدمی کو سات یا آٹھ سو فیس تکلیف نہیں دیتی ،لیکن ضرب تقسیم کرکے لاکھوں میں حساب کرنے والوں پر ضرور ہذیانی کیفیت طاری کر دیتی ہے۔بنیادی طور پر این ٹی ایس کی مخالفت وہ لوگ کرتے ہیں جو امتحانات میں رٹا لگا کر پاس ہوتے ہیں،این ٹی ایس اس سسٹم کے الٹ ہے، ہر وہ طالب علم جس نے صحیح معنوں میں علم کو سمجھا ہے،اور نصاب پورا پڑھا ہے، اس کے لیے یہ امتحان مشکل نہیں۔ جو نظام ملک میں شفافیت لائے، اس پر تنقید مناسب نہیں۔ہمارے سیاست دان، جاگیر دار وڈیرے اسی لیے اس کے مخالف ہیں کہ اب ان کی سفارش نہیں مانی جاتی، کسی کو ناجائز پاس نہ کیا جا سکتا ہے نہ کروایا جا سکتا ہے۔سو برادر محترم ملک کو بہتری کی طرف جانے دیں ۔