دستک کسی کی ہے، کہ گماں دیکھنے تو دے
دروازہ ہم کو تیز ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کھولنے تو دے !!

اپنے لہو کی تال پہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ خواہش کے مور کو
اے دشتِ احتیاط ۔۔۔۔۔۔۔۔۔!! کبھی ناچنے تو دے

... سودا ہے عمـــــر بھر کا کوئی کھیل تو نہیں !!
اے چشــــــمِ یار مجھ کو ذرا سوچنے تو دے !!

اُس حــــرفِ کُن کی ایک امانت ہے میرے پاس
لیکن یہ کائنات ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مجھے بولنے تو دے !

شاید ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کسی لکیر میں لکھا ہو میرا نام !
اے دوست،،، اپنا ہاتھ مجھے دیکھنے تو دے !!

یہ سات آسمان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کبھی مختصر تو ہوں
یہ گھومتی زمین ۔۔۔۔۔۔۔ کہیں ٹھہرنے تو دے !!

کیسے کسی کی یاد کا چہرہ بناؤں میں ؟؟؟
"امجد" وہ کوئی نقش کبھی بھُولنے تو دے !!
امجد اسلام امجد