ھم تھے نیاز مندِ شوق , شوق نے ھم کو کیا دیا
صبح کا دُکھ بڑھا دیا , شام کا دکھ بڑھا دیا
دن میں عذابِ ذات کے , تُو مرا ساتھ بھی تو دے
نیند تھی میری زندگی , تُو نے مجھے جگا دیا
واعظ و زاہد و فقیہہ , تم کو بتائے بھی تو کون...
وہ بھی عجیب شخص تھا , جس نے ھمیں خدا دیا
تُو نے بھی اپنے خدّوخال , جانے کہاں گنوا دیے
میں نے بھی اپنے خواب کو , جانے کہاں گنوا دیا
جانے وہ کاروانِ جاں , کیوں نہ گزر سکا جسے
تُو نے بھی راستہ دیا , میں نے بھی راستہ دیا
تُو مرا حوصلہ تو دیکھ ,میں ھی کب اپنے ساتھ ھوں
تُو مرا کربِ جاں تو دیکھ , میں نے تجھے بُھلا دیا
ھم جو گلہ گزار ھیں , کیوں نہ گلہ گزار ھوں
میں نے بھی اُس کو کیا دیا اُس نے بھی مجھ کو کیا دیا
قید کے کُھل رھے تھے دَر , وقت تھا دل نواز تر
رنگ کی موج آئی تھی , ھم نے اُسے گنوا دیا
ھم بھی خدا سے کم نہیں , جو اُسے ماننے لگے
وہ بھی خدا سے کم نہ تھا , جس نے ھمیں خدا دیا

"جون ایلیا"