میں وہ کس طرح سے کروں بیاں
جو کیے گئے ہیں ستم یہاں
سُنے کون میری یہ داستاں
کوئی ہمنشیں ہے نہ رازداں

جو تھا جھوٹ وہ بنا سچ یہاں
نہیں کھولی میں نے مگر زباں
یہ اکیلا پن ۔۔۔۔۔۔۔ یہ اداسیاں
میری زندگی کی ہیں ترجماں

میری ذات ذرّہِ بے نشاں
کبھی سوہنی صبحوں میں گھومنا
کبھی اُجڑی شاموں کو دیکھنا
کبھی بھیگی آنکھوں سے جاگنا
کبھی بیتے لمحوں کو سوچنا

مگر ایک پل ہے اُمید کا
ہے مجھے خدا کا جو آسرا
نہ ہی میں نے کوئی ۔۔۔۔۔۔ گلا کیا
نہ ہی میں نے دی ہیں دوہائیاں

میری ذات ذرّہِ بے نشاں
میں بتاؤں کیا مجھے کیا ملے
مجھے صبر ہی کا صلہ ملے
کسی یاد ہی کی ردا ملے
کسی درد ہی کا صلہ ملے

کسی غم کی دل میں جگہ ملے
جو میرا ہے وہ مجھے آ ملے
رہے شاد یونہی ۔۔۔۔۔۔ میرا جہاں
کہ یقین میں بدلے میرا گماں

میری ذات ذرّہِ بے نشاں
میری ذات ذرّہِ بے نشاں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
صابر ظفر