گفتگو درد کی عالم کی زباں ٹھہرے گی
داستاں عشق کی مقتل کا بیاں ٹھہرے گی

شاہِ ست رنگ نے اک حشر سجایا ہے نیا
بندگی دہر کی اب حکم رواں ٹھہرے گی

شیخ و واعظ کا بیاں، فلسفہ ء عشقِ بتاں
شاعری دیر و کلیسا کی اذاں ٹھہرے گی

بے حجاب آج چلی لیلیٰ سوئے دشت جنوں...
پارسائی کسی مجنوں کی کہاں ٹھہرے گی


 


جسم خوابوں کے بیاباں میں بھٹکتا ہو گا
روح قندیلِ محبت کا دھواں ٹھہرے گی

موم کا جسم کڑی دھوپ سہے گا کب تک
زلفِ جاناں کی گھٹا راحتِ جاں ٹھہرے گی

بوسہ دینے کو گلاب آئیں گے صحراؤں میں
آبلہ پائی کسے دل پہ گراں ٹھہرے گی

درد خاموش ہے درویش سمندر کی طرح
خامشی بن کے جنوں حشر فشاں ٹھہرے گی