awesome poetry by Sahir Ludhianvi


اُسی دوراہے پر
اب نہ اُن اونچے مکانوں میں قدم رکھوں گا
میں نے اِک بار یہ پہلے بھی قسم کھائی تھی
اپنی نادار محبت کی شکستوں کے طفیل
زندگی پہلے بھی شرمائی تھی ۔۔۔۔۔۔ جھنجلائی تھی
اوریہ عہد کیا تھا ۔۔۔۔۔ کہ بہ ایں حالِ تباہ
اب کبھی پیار بھرے گیت نہیں گاؤں گا
کسی چلمن نے پکارا بھی تو بڑھ جاؤں گا
کوئی دروازہ کھلا بھی تو پلٹ آؤں گا
پھر ترے کانپتے ہونٹوں کی فسوں کار ہنسی
جال بننے لگی ۔۔۔۔۔ بنتی رہی ۔۔۔۔۔۔ بنتی ہی رہی
میں کھنچا تجھ سے ۔۔۔۔۔۔ مگر تو مری راہوں کے لیے
پھول چنتی رہی ۔۔۔۔۔ چنتی رہی ۔۔۔۔۔ چنتی ہی رہی
برف برسائی مرے ذہن و تصور نے مگر
دل میں اِک شعلۂ بے نام سا لہرا ہی گیا
تیری چپ چاپ نگاہوں کو سلگتے پا کر
میری بیزار طبیعت کو بھی پیار آ ہی گیا
اپنی بدلی ہوئی نظروں کے تقاضے نہ چھپا
میں اِس انداز کا مفہوم سمجھ سکتا ہوں
تیرے زرکار دریچوں کی بلندی کی قسم
اپنے اقدام کا مقسوم سمجھ سکتا ہوں
اب نہ اُن اونچے مکانوں میں قدم رکھوں گا
میں نے اِک بار یہ پہلے بھی قسم کھائی تھی
اِسی سرمایہ و افلاس کے دوراہے پر
زندگی پہلے بھی شرمائی تھی ۔۔۔۔۔۔ جھنجھلائی تھی


شاعر: ساحر لدھیانوی