"ھر بار میرے سامنے آتی رھی ھو تم"


ھر بار میرے سامنے آتی رھی ھو تم
ھر بار تم سے مل کے بچھڑتا رھا ھوں میں


تم کون ھو یہ خود بھی نھیں جانتی ھو تم
میں کون ھوں یہ خود بھی نھیں جانتا ھوں میں


تم مجھ کو جان کر ھی پڑی ھو عذاب میں
اور اس طرح خود اپنی سزا بن گیا ھوں میں


تم جس زمیں پر ھو میں اس کا خدا نھیں
پس--- سر. بسر ازیتِ آزار ھی رھو


بیزار ھو گئ ھو بھت زندگی سے تم ؟؟
جب بس میں کچھ نھیں تو بیزار ھی رھو


تم کو یہاں کے سایا ؤ پرتو سے کیا غرض
تم اپنے حق میں بیچ کی دیوار ھی رھو


میں ابتداءِ عشق سے بے مھر ھی رھا
تم انتحاءِ عشق کا معیار ھے رھو


تم خون تھوکتی ھو سن کر خوشی ھوئ
اس رنگ اس ادا میں بھی پٗرکار ھی رھو


میں نے یہ کب کہا تھا محبت میں ھے نجات ؟؟
میں نے یہ کب کہا تھا وفادار ھی رھو


اپنی متاءِ ناز لٹا کر میرے لیۓ
بازارِ التفات میں نادار ھی رھو


ﺟﺐ ﻣﯿﮟ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﻧﺸﺎﻁِ ﻣﺤﺒﺖ ﻧﮧ ﺩﮮ ﺳﮑﺎ
ﻏﻢ ﻣﯿﮟ ﮐﺒﮭﯽ ﺳﮑﻮﻥِ ﺭﻓﺎﻗﺖ. ﻧﮧ ﺩﮮ ﺳﮑﺎ


ﺟﺐ ﻣﯿﺮﮮ ﺳﺐ ﭼﺮﺍﻍِ ﺗﻤﻨﺎ ﮨﻮﺍ ﮐﮯ ﮨﯿﮟ
ﺟﺐ ﻣﯿﺮﮮ ﺳﺎﺭﮮ ﺧﻮﺍﺏ ﮐﺴﯽ ﺑﮯ ﻭﻓﺎ ﮐﮯ ﮨﯿﮟ


ﭘﮭﺮ ﻣﺠﮫ ﮐﻮ ﭼﺎﮨﻨﮯ ﮐﺎ ﺗﻤﮩﯿﮟ. ﮐﻮﺋﯽ ﺣﻖ ﻧﮩﯿﮟ
ﺗﻨﮩﺎ ﮐﺮﺍﮨﻨﮯ ﮐﺎ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﺣﻖ ﻧﮩﯿﮟ


"ﺟﻮﻥ ﺍﯾﻠﯿﺎ"