کچھ دن تو بسو میری آنکھوں میں،
پھر خواب اگر ہو جاوٗ تو کیا؟

کوئی رنگ تو دو میرے چہرے کو،
پھر زخم اگر مہکاوٗ تو کیا؟...

اک آئینہ تھا سو ٹوٹ گیا،
اب خود سے اگر شرماوٗ تو کیا؟


 


جب ہم ہی نہیں مہکے صاحب،
تم بادِ صبا کہلاوٗ تو کیا؟

جب دیکھنے والا کوئی نہیں،
بجھ جاوٗ تو کیا جل جاوٗ تو کیا؟؟

میں تنہا تھی میں تنہا ہوں،
تم آوٗ تو کیا؟ نہ آوٗ تو کیا؟