ٹھہری ٹھہری ھوئی طبیعت میں روانی آئی
آج پھر یاد محبت کی کہانی آئی


آج پھر نیند کو آنکھوں سے بچھڑتے دیکھا
آج پھر یاد کوئی چوٹ پرانی آئی


مدّتوں بعد چلا اُن پہ ھمارا جادو
مدّتوں بعد ھمیں بات بنانی آئی


مدّتوں بعد پشیماں ھوا دریا ھم سے
مدّتوں بعد ھمیں پیاس چُھپانی آئی


مدّتوں بعد کھُلی وسعتِ صحرا ھم پر
مدّتوں بعد ھمیں خاک اُڑانی آئی


اتنی آسانی سے ملتی نہیں فن کی دولت
ڈھل گئی عمر تو غزلوں پہ جوانی آئی


مدّتوں بعد میسر ھوا ماں کا آنچل
مدّتوں بعد ھمیں نیند سُہانی آئی


"اقبال اشعر"