یہ جفائے غم کا چارہ
وہ نِجات دل کا عالم


ترا حُسن دستِ عیسٰیؑ
تری یاد رُوئے مریمؑ


دل و جاں فدائے راہے
کبھی آ کے دیکھ ہمدم


سرِ کُوئے دل فِگاراں
شبِ آرزو کا عالم


تری دِید سے سوا ہے
ترے شوق میں بہاراں


وہ چمن جہاں گِری ہے
تری گیسوؤں کی شبنم


یہ عجب قیامتیں ہیں
تری رہگُزر میں گُزراں


نہ ہُوا کہ مَر مِٹیں ہم
نہ ہُوا کہ جی اُٹھیں ہم


لو سُنی گئی ہماری
یُوں پِھرے ہیں دن کہ پِھر سے


وہی گوشۂ قفس ہے
وہی فصلِ گُل کا ماتم


"فیض احمد فیضؔ"