Results 1 to 2 of 2

Thread: اکیلے پن کی اذیتوں کو شمار کرنا بھی سیکھ لو &#

  1. #1
    Member Array carefree's Avatar
    Join Date
    Feb 2012
    Posts
    3,505
    Country: Canada
    Rep Power
    9

    اکیلے پن کی اذیتوں کو شمار کرنا بھی سیکھ لو &#


    اکیلے پن کی اذیتوں کو شمار کرنا بھی سیکھ لو گے
    کرو گے الفت تو روز جینا یہ روز مرنا بھی سیکھ لو گے

    کوئی ارادہ ابھی تخیل میں پھول بن کے مہک رہا ہے
    جب آسماں نے مزاج بدلا تو پھر بکھرنا بھی سیکھ لو گے

    محبتوں کے یہ سارے رستے ہی سہل لگتے ہیں ابتدا میں
    تم آج چل تو رہے ہو لیکن کہیں ٹھہرنا بھی سیکھ لو گے

    کسی خلش سے فریب کھا کر تم اپنے جیون کے راستوں سے
    نظر بدلتی ہوئی رتوں کی طرح گزرنا بھی سیکھ لو گے

    خمارِ قربت کے خود فراموش موسموں میں یونہی اچانک
    تم اپنی ہستی کی جان پہچان سے مکرنا بھی سیکھ لو گے

    یہ وصل کا بے ثبات موسم جدائیوں کو صدائیں دے گا
    حسن ذرا دیر زندہ رہنے کے بعد مرنا بھی سیکھ لو گے




     



  2. #2
    Member Array rabia iqbal rabi's Avatar
    Join Date
    May 2012
    Location
    Karachi, Pakistan, Pakistan
    Posts
    2,365
    Country: Pakistan
    Rep Power
    8
    تم آج چل تو رہے ہو لیکن کہیں ٹھہرنا بھی سیکھ لو گے

    bohat khob

Thread Information

Users Browsing this Thread

There are currently 1 users browsing this thread. (0 members and 1 guests)







Similar Threads

  1. Replies: 0
    Last Post: 12-28-2012, 04:07 PM
  2. Replies: 1
    Last Post: 12-01-2012, 07:27 PM
  3. Replies: 0
    Last Post: 07-31-2012, 07:05 PM
  4. Replies: 0
    Last Post: 07-29-2012, 03:48 PM
  5. اقبال تیرے دیس کا حال کیا سناوں؟
    By aamirbati in forum Shair-o-Shairi
    Replies: 0
    Last Post: 10-26-2011, 10:35 PM

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •  



Get Daily Forum Updates

Get Most Amazing E-mails Daily
Full of amazing emails daily in your inbox
Join Nidokidos E-mail Magazine
Join Nidokidos Official Page on Facebook


Like us on Facebook | Get Website Updates | Get our E-Magazine