وہ ہم سفر جو محبت کا دے رہا تھا پیام
لو آج اس کو بلا نے قضا چلی آئی
خیال باب تھا احمد فراز الفت کا
دیا اسی کا بجھا نے ہوا چلی آئی