اب کے تجدیدِ وفا کا نہیں اِمکاں جاناں
یاد کیا تُجھ کو دِلائیں تیرا پیماں جاناں

یُونہی موسم کی ادا دیکھ کے یاد آیا
کِس قدر جلد بدل جاتے ہیں اِنساں جاناں

زِندگی تیری عطا تھی سو تیرے نام کی ہے
ہم نے جیسے بھی بَسر کی تیرا اِحساں جاناں

دِل یہ کہتا ہے کہ شاید ہو اَفسُردہ تُو بھی
دِل کی کیا بات کریں دِل تو ہے ناداں جاناں

اوّل اوّل کِی مُحبت کے نَشے یاد تو کر
بے پیئے بھی تیرا چہرہ تھا گُلستاں جاناں

آخر آخر تو یہ عالم ہے کے اب ہوش نہیں
رگِ مِینا سُلگ اُٹھی کہ رگِ جاں جاناں

مُدتوں سے یہی عالم نہ توقُع نہ اُمید
دِل پُکارے ہی چلا جاتا ہے جاناں جاناں

اب کے کچھ ایسی سجی محفل یَا راں* جاناں
سَر-با-زانوں ہے کوئی سَر-با-گریباں جاناں

ہر کوئی اپنی ہی آوازسے کانپ اُٹھتا ہے
ہر کوئی اپنے ہی سائے سے ہراساں جاناں

جس کو دیکھو وہی زنجیر با پہ لگتا ہے
شہر کا شہر ہُوا داخل زِنداں جاناں

ہم بھی کیا سا دہ تھے ہم نے بھی سمجھ رکھا تھا
غمِ دُوراں سے جُدا ہے غمِ جاناں جاناں

اب تیرا ذکر شائد ہی کبھی غزل میں آئے
اور سے اور ہوئے دَرد کے عُنواں جاناں

ہم کے روٹھی ہوئی ُرت کو بھی منا لیتے تھے
ہم نے دیکھا ہی نہ تھا موسمِ ہِجراں جاناں

ہوش آیا تو سبھی خواب تھے ریزہ ریزہ
جیسے اُڑتے ہُوئے اَوراقِ پریشان جاناں