[COLOR=#3E3E3E]



+ Reply to ThreadResults 1 to 1 of 1


Thread: Hali ke ek sher se mutaser ho kar [Ik tasawwur tha] Poetry by Rabia Iqbal rABI




  • 07-30-2012 11:06 PM
    rabia iqbal rabi

    MemberArrayJoin DateMay 2012LocationKarachiPosts370Country: Rep Power1

    Hali ke ek sher se mutaser ho kar [Ik tasawwur tha] Poetry by Rabia Iqbal rABI

    غزل
    اک تصور تھا جو محفوظ تھا خوابوں میں میرے
    اک خوشبو تھی جو دل و جاں میں بسی ر ہتی تھی


    عشق سنتے تھے ہم وہ یہی ہے شا ئد
    خود بخود دل میں ہےاک شخص سما یا جا تا


    لاکھھ روکا پروانے کو رو رو کر شمع نے
    پا س میرے نہ آ جل جا ۓ گا د یوا نے تو


    کچھہ بھی کہنا اسےثا بت ہوا ہے بے سود
    وہ تو شمع کا پروانہ ہے روکے نہ رک پا تا


    رات میں دور تک پھیلے ہو ۓ ہیں سنا ٹے
    اتنی خا موشی اور سنسنا تی ہو ئی ہوائیں


    وہ تو تیرا تصور سا تھہ میں تھا ورنہ
    میں تو اپنے ہی سا ئے سے گھبرا جا تا


    ہم رہے گم ماضی میںحال کی خبر نہ لی رابی
    پچھلے تجر با ت تھے تلخ اتنے سن کر جنہیں مستقبل تھرا جا تا

    Last edited by rabia iqbal rabi; 07-30-2012 at 11:09 PM.




     



























+ Reply to Thread
Quick Navigation Shair-o-Shairi Top



Quick Reply


[COLOR=#000000][FONT=Arial][TABLE="class: cke_editor, width: 853"]
[TR="bgcolor: transparent"]
[TD="class: cke_top, bgcolor: transparent"]FontSize