چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ جس طرح اُنہوں نے تسلیم کیا کہ اس نئے قانون کی شق نمبر بارہ غلط ہے اس کے بعد وفاقی حکومت کیسے کہہ سکتی ہے کہ یہ عوامی اہمیت کا معاملہ نہیں ہے۔ اُنہوں نے کہا کہ عدل کا مقصد یہ نہیں کہ امیر کو استثنیٰ دو اور غریب کو سزا دو۔
یہ قانون آئین کے اُس اصول کی خلاف ورزی کرتا ہے جس میں کہا گیا ہے کہ قانون کی نظر میں تمام انسان برابر ہیں۔جسٹس شاکراللہ جان
وفاق کے وکیل عبداالشکور پراچہ کا کہنا ہے کہ نیا قانون دوسرے وزیر اعظم کو بچانے کے لیے لایا گیا ہے