کبھی آس ہے کبھی یاس ہے
کبھی روشنی کبھی تیرگی
کبھی خار بن کے چبھے مجھے
کبھی پھول لگتی ہے زندگی

کبھی سایہ ہے کبھی دھوپ ہے
کبھی اشک ہے اور کبھی ہنسی
کبھی خوشیاں دل سے چھلک اٹھیں
کبھی دکھ کی چادر ہے زندگی

کبھی رنگ دھنک کے ہیں چار سو
اور پھیکی ہے بے رنگ کبھی
کبھی ماں کی گود کی طرح نرم
اور پہاڑ سی سخت کبھی زندگی


کبھی ہنستے ہنستے رلاتی ہے
کبھی روتے روتے ہنساتی ہے
کبھی مہرباں کبھی سنگ دل
کیا عجب ہی شے ہے یہ زندگی


کبھی خوشیاں رم جھم برستی ہیں
کبھی غم کی آندھیاں چلتی ہیں
کبھی نفرتوں کی ہوا چلے
کبھی پیار کا نغمہ ہے زندگی


کبھی آہ ہے کبھی واہ ہے
کبھی نوحہ ہے اور کبھی ہنسی
کبھی لگتی ہے بڑی پیاری شے
کبھی بار لگتی ہے زندگی